ایون میں کل چترال محفل مشاعرہ

ایون(زیل نمائندہ)چترال کے خوب صورت اوردل کش وادی ایون میں معروف سماجی اور ادبی شخصیت عنایت اللہ اسیر کی رہائش گاہ میں کل چترال محفل مشاعرے کا اہتمام کیا گیا۔ انجمن ترقی کھوار حلقہ ایون اور انجمن شمع فروزان ایون کی مشترکہ انتظام سے منعقدہ اس مشاعرے میں بہت بڑی تعداد میں شعراء کرام نے حصہ لیا۔

معروف قانون دان عبد الولی ایڈوکیٹ مہمان خصوصی تھے جبکہ تقریب کی صدارت میجر ریٹائرڈ شہزادہ شمس الملک  کررہے تھے۔ مشاعرے کا عنوان تھا “چھترارو بوژو مگر چھتراریو مو بوژو”۔  مشاعرے میں بروز کے طالب علم نے حافظ خوش ولی خان کا بہت خوبصورت نعت شریف پیش کیا۔ شعراء نے اپنے کلام میں عوام کو یہ پیغام دینے کی کوشش کی کہ چترال کو تقسیم ہونے سے تم لوگ اپنا محبت، ملنا جلنا اور اپنی روایات برقرار رکھنا۔بعض شعراء نے موجودہ حکومت کی مہنگائی اور ان کی پالیسیوں کی وجہ سے عوام کی پریشانی کا بھی منظر کشی کی کوشش کی۔ کچھ شعراء نے حکومتی پالیسی کو سراہا بھی۔بالائی چترال سے آئے ہوئے شعراء نے بھی ترنم کے ساتھ اپنا کلام پیش کرکے حاضرین کو محظوظ کیا۔ بعض شعراء نے اپنے کلام کے ذریعے عوام کو یہ پیغا م دینے کی کوشش کی کہ وہ محنت کرے  اور ترقی کے راہ پر گامزن ہو     کیونکہ چترال میں زیادہ تر کاروبار باہر سے آئے ہوئے کاروباری لوگوں نے قبضہ کیا ہے۔ مشاعرے میں کلام پیش کرنے والوں میں   افضل اللہ افضل، صالح ولی آزاد، صادق اللہ صادق، ذاکر محمد زحمی، ظہور الحق دانش، اقبال الدین سحر، نوجوان شاعر سرور سرور، محمد شہزاد، حافظ خوش ولی خان،محمد اسرار گل داؤدی، فیض الباری بیگان دروش، نواب خان  کالاش وادی بریر، مطیع الرحمان قمبر بمبوریت، صالح نظام ایون، عنایت اللہ سیر ایون، مصبا ح الدین شاہ صبا بروز، چئیرمین شوکت علی چترال، سردار اعظم سردار گرم چشمہ،  عبد الولی خان، سید الرحمان  سعیدی پرئیت، عبید فلک اوویر، افضل شاہ محجور تورکہو، علاء الدین عرفی تریچ، صفی اللہ آصفی ایون، شہزادہ تنویر الملک اور دوسروں  وغیرہ  نے مشاعرے میں حصہ لیا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے میجر شمس الملک نے کہا کہ چترال کی مثالی امن کا راز اس کی مخصوص ثقافت کو زندہ رکھنا ہے اور یہاں کے علماء، شعراء اور ادباء بھی اس امن کو برقرار رکھنے میں کلیدی کردار ادا کررہے ہیں۔
مہمان خصوصی نے تمام شعراء   پر زور دیا کہ وہ اپنے کلام میں امن، محبت، بھائی چارے کا پیغام نوجوان نسل تک پہنچائیں۔ مشاعرے میں چترال میں بڑھتی ہوئی خودکشیوں کے رحجان اور چترال سے باہر بیٹیوں کی شادی پر بھی تنقید کرتے ہوئے اس کی روک تھام کے لیے قدم اٹھانے پر زور دیا۔چند نوجوان شعراء نے نہایت سنجیدہ کلا م پیش کیا اور بعض سینئر شعراء نے مزاحیہ انداز میں  شرکاء کو محظوظ کرنے کی کوشش کی۔
تقریب کے احتتام پر جو رات دو بجے تک جاری رہی میزبان عنایت اللہ اسیر نے تمام شرکاء، ادباء اور نعت خوانوں کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے دور دراز سے آکر اس مشاعرے میں حصہ لیکر اپنا کلام پیش کیا۔
پروگرام کے آخر میں ۶۰ سال سے زیادہ عمر کے شعراء کو ناصرالملک ایوارڈ بھی دیا گیا۔

زیل نیوز میں شائع مضامین اور کمنٹس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں
99630cookie-checkایون میں کل چترال محفل مشاعرہ
Zeal Mobile Reporter

کالم نگار/رپورٹر : گل حماد فاروقی

Share This