لب کشائی

طاہر الدین شادان کا تعلق تورکہو کے علاقے کھوت سے ہے۔ وہ ایک محب وطن اور اعلی اقدار کے مالک خوبصورت کالم نویس ہیں۔ وہ ہمیشہ معاشرتی پہلووں پر قلم کشائی کو لب کشائی کے عنوان سے منظر عام پر لاتے ہیں

نگاہ مرحوم واقعی نگاہ تھے !

معروف ماہر تعلیم کھو تہذیب و ثقافت کے امین مایہ ناز محقق ،مصنف اور مترجم محترم مولا نگاہ صاحب اچانک ہمیں داغ مفارقت دے گئے اگرچہ نگاہ صاحب گزشتہ ایک سال سے جان لیوا مرض میں مبتلا تھے تاہم انہوں نے اپنے دوستوں رشتہ داروں اور عزیز و اقارب کو اس موذی مرض کے بارے ہمیشہ خوش فہمی میں رکھا ...

مزید پڑھئے

میرا معیار اور کالم نگار

غور سے سنئیے کہ کوئی بھی صحافی میرے قائد کی تعریف کرے چاہے وہ کتنا ہی بے ضمیر لفافہ کیوں نہ ہو میرے نزدیک وہ نڈر بے باک اور حق گو صحافی ہے اور کوئی بھی صحافی جو میرے قائد اور میری پارٹی پر تنقید کرے چاہے وہ کتنا ہی با ضمیر غیرت مند اور حق گو کیوں نہ ہو ...

مزید پڑھئے

خود کشی کے موضوع پر سیمینار

گزشتہ دن چترال پریس کلب کی طرف سے پریس کلب میں ایک مہراکہ منعقد کیا گیا جس کا موضوع تھا “چترال میں خود کشی کے بڑھتے واقعات” معروف اسکالر پی ڈی چترال یونیورسٹی ڈاکٹر بادشاہ منیر بخاری اور آغا خان ہائیر سیکنڈری  سکول سین لشٹ کے اسٹوڈنٹ کاؤنسلر محمد جلال الدین شامل نے اس موضوع پر  جامع مقالے پیش  کیے۔ ...

مزید پڑھئے

مشہود شاہد صاحب “عشق نگر” میں

عشق نگر اردو شاعری” اردو کے نامور اور مستند شعرا اور ادبا کی بین الاقوامی آن لائن تنظیم ہے جو کہ اردو زبان کی ترویج کے لیےکوشاں ہے اس تنظیم کے تحت مختلف شعرا کے ساتھ نشست کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ اس نشست کے لیے جس شاعر کو منتخب کیا جاتا ہے ۔نشست سے پہلے اس کا تعارف اور ...

مزید پڑھئے

چترال میں چمچہ گیری نظام

پاکستان کے تقریباً تمام چھوٹے بڑے شہروں میں غریب عوام پر چوہدریوں، وڈیروں، نوابوں اور جاگیر داروں کا کسی نہ کسی طرح تسلط قائم رہا ہے۔ آج بھی پاکستان کے نوے فیصد لوگ ان چوہدریوں ،وڈیروں، نوابوں اور جاگیر داروں کے زیر اثر ہیں۔ یہ لوگ مختلف شہروں میں لوگوں کو اپنے ماتحت رکھنے کے لئے مختلف حربے استعمال کرتے ...

مزید پڑھئے

کھربوں کی عزت اور صرف چار کروڑ

سینٹ الیکشن میں ممبران کی خرید و فروخت یا ووٹ کی خرید و فروخت کوئی نہیں بات نہیں۔  ووٹر چاہے جنرل الیکشن کے ہو یا بلدیاتی الیکشن کے ،سینٹ کے ہو یا چیئرمین سینٹ کے ، ہر دور میں بکنے والے بکتے رہے۔ ووٹ بھیجنے والے بھیجتے رہے۔ لیکن اس بار کچھ زیادہ ہی شور مچایا گیا کہ ممبران بک ...

مزید پڑھئے

میں اکیلا ہی چلا تھا جانب منزل مگر

ایک دور وہ تھا جب چترال میں منشیات فروشی کو کوئی اہم اور قابل غور مسلہ ہی نہیں سمجھا جاتا تھا سن دو ہزار گیارہ میں جب میں نے منشیات کی لت میں مبتلا نو عمر نوجوانوں کو دیکھا تو مجھے بڑا افسوس ہوا کہ ایک بچہ اگر دس گیارہ سال کی عمر میں منشیات کا عادی بن جائے تو ...

مزید پڑھئے

میں مجرم ہوں

چترال کو پاکستان میں ضم ہوئے اڑتالیس برس بیت گئے باالفاظ دیگر نصف صدی ہونے کو ہے اس طویل عرصے میں چترال کے عوام نے ہر الیکشن میں بھرپور حصہ لیا اور درجنوں نمائندوں کو اپنے مسائل حل کرنے کے لیے اسمبلی میں بھیجا یہاں کے لوگوں نے ووٹ غریب کو بھی دیا ،امیر کو بھی، دینی جماعتوں کو بھی ...

مزید پڑھئے

ائمہ کے لیے اعزازیہ اور چند حقائق

گزشتہ دو ڈھائی مہنیوں سے جہاں اخبارات ٹی وی چینلز اور سوشل میڈیا میں گورنمنٹ آف پختونخوا کے ائمہ کے لیے اعزازیہ کے اس اقدام بہت زیادہ سراہا جا ر ہا ہے وہاں کچھ لوگ ائمہ کے لیے ماہانہ دس ہزار اعزازیے کو ائمہ کے ساتھ مذاق قرار دے کر اس کی شدید مخالفت کر رہے ہیں چونکہ خیبر پختونخوا ...

مزید پڑھئے

اپر چترال کے عوام کو جاگنا ہوگا

لگتا ہے کہ وفاق اور صوبے کی رسہ کشی کے نتیجے میں اپر چترال مزید لمبے عرصے تک بجلی سے محروم رہے گا۔ واضح رہے کہ واپڈا کی طرف سے پیڈو پر زور دیا جا رہا ہے کہ وہ پیڈو واپڈا سے بجلی خرید کر ریشن بجلی گھر کے صارفین کو بجلی فراہم کرے لیکن تاحال صوبائی حکومت کا ادارہ ...

مزید پڑھئے